اسلام آباد: ٹی وی اینکر پرسن اور 92 نیوز چینل سے وابستہ ر‌ؤف کلاسرا کی ایف آئی اے سائبر کرائمز رپورٹنگ سنٹر میں دی گئی درخواست پر سنٹر نے جنوبی پنجاب سے تعلق رکھنے والے دو افراد ساحل چانڈیو اور توقیر عرف نعمان کلاسرا کے خلاف سمن جاری کرتے ہوئے دونوں کو 29 جون صبح گیارہ بجے اسلام آباد میں طلب کرلیا ہے

ساحل چانڈیو انسانی حقوق کے کارکن

ساحل چانڈیو انسانی حقوق کی تنظیم ایمنسٹی انٹرنیشنل کے کارکن ہیں- پاکستان پیپلزپارٹی کے ذیلی ونگ پیپلز اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن –پی وائی او ضلع مظفر گڑھ کے صدر ہیں- سراغيکی وسیب میں ان کا شمار جبری گمشدگیوں ،فرقہ واریت، ریاستی و غیر ریاستی عناصر کی طرف سے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے خلاف ایک توانا آواز سمجھے جاتے ہیں

نعمان کلاسرا /توقیر پیشہ کے اعتبار سے انجنئیر ہیں- یہ بھی انسانی حقوق کے کارکن اور پاکستان پی پی پی سے تعلق رکھتے ہیں

 

توقیر عرف نعمان کلاسرا انجنئیر کارکن پی پی پی

صحافی رؤف کلاسرا  نے اپنی درخواست میں موقف اختیار کرتے ہوئے لکھا ہے کہ ساحل چانڈیو، نعمان کلاسرا، صفدر کلاسرا و دیگر نے سوشل میڈیا پر ان کی کردار کشی کی ہے

توقیر کلاسرا کو بھیجیے گئے ایف آئی آے کے سمن کا عکس

جبکہ ساحل چانڈیو اور نعمان کلاسرا کا کہنا ہے کہ انہوں نے رؤف کلاسرا کی جانب سے اپنے بھانجے کو مبینہ متنازعہ زمین پر قبضہ کروانے کے لیے ریونیو ڈیپارٹمنٹ اور پولیس کو استعمال کرنے کی مذمت کی تھی- لیہ ضلع کے ڈی سی، ڈی پی او کو استعمال کرنے کا مبینہ اعتراف رؤف کلاسرا  نے اپنے کالم اور فیس بک اسٹیٹس میں بھی کیا ہے۔

ساحل چانڈیو کو بھیجے گئے ایف آئی اے سمن کا عکس

سوشل میڈیا پر رؤف کلاسرا کی جانب سے ایف آئی اے کے زریعے سے ساحل چانڈیو اور نعمان کلاسرا کو سمن جاری کرنے کے خلاف مذمتی بیانات کا سلسلہ جاری ہے

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here